سندھ ہائی کورٹ، آغا سراج درانی کی درخواست ضمانت مسترد جبکہ اہلیہ اور بیٹوں کی ضمانت منظور

0
25

کراچی(این این آئی)سندھ ہائی کورٹ نے اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کی درخواست ضمانت مسترد جب کہ ان کی اہلیہ اور بچوں کی ضمانت منظور کرلی۔بدھ کوسندھ ہائی کورٹ میں اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی و دیگر کے خلاف آمدن سے زائد اثاثے بنانے سے متعلق ریفرنس کی سماعت ہوئی، سندھ ہائی کورٹ میں جسٹس ندیم اختر اور جسٹس اقبال کلہوڑو پر مشتمل اسپیشل بینچ نے آغا سراج درانی سمیت 18 ملزمان کی درخواست ضمانت پر فیصلہ سنادیا، عدالت نے آغا سراج درانی سمیت 8 ملزمان کی درخواست ضمانت مسترد کردی، جب کہ ان کی اہلیہ اور بیٹوں کی ضمانت منظور کرلی گئی۔سندھ ہائیکورٹ کے اسپیشل بینچ نے درخواست ضمانت مسترد کرتے ہوئے ملزمان کو گرفتار کرکے جیل بھیجنے کا حکم دیا۔آغا سراج درانی سمیت تمام ملزمان کے خلاف آمدن سے زائد اثاثے بنانے کا ریفرنس احتساب عدالت میں زیر سماعت ہے، نیب ریفرنس میں آغا سراج درانی کی اہلیہ اور بیٹیوں کو بھی نامزد کیا گیا ہے، ملزمان میں آغا سراج درانی، بیٹے شہباز درانی، طفیل احمد، میٹھا خان، اسلم پرویز لنگاہ، ذوالفقار ڈاہر، گلزار احمد سمیت 18 ملزمان شامل ہیں۔نیب کے مطابق اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی و دیگر پر ایک ارب 61 کروڑ کے غیر قانونی اثاثے بنانے کا الزام ہے جبکہ کچھ جائیدادیں فروخت بھی کر دی ہیں۔ غیر قانونی اثاثہ جات میں گھر، 35گاڑیاں اور ساڑھے 300 تولہ سونا بھی شامل ہے جبکہ 11 کروڑ روپے کی قیمتی گھڑیاں بھی برآمد ہوئیں۔ایف بی آر کے مطابق آغا سراج درانی نے 2007 سے 2018 تک 11کروڑ روپے کی آمدنی ظاہر کی تھی مگر دوران تفتیش آغا سراج درانی نے آمدنی 8کروڑ بتائی۔ اثاثوں میں 11گاڑیاں جبکہ بیٹے، اہلیہ اور بیٹوں کے نام پر کراچی اور ایبٹ آباد میں جائیداد ہیں۔سپریم کورٹ کے حکم پر آغا سراج درانی و دیگر کی درخواست ضمانت پر دوبارہ سماعت کی جارہی ہے، جسٹس ندیم اختر اور جسٹس اقبال کلہوڑو پر مشتمل اسپیشل بینچ نے درخواست ضمانت پر فیصلہ محفوظ کیا تھا۔ خیال رہے اسپیکر سندھ اسمبلی پر ایک ارب سے زائد غیر قانونی آمدن سے اثاثے بنانے کا الزام ہے۔ ملزمان کے خلاف احتساب عدالت میں ریفرنس زیر سماعت ہے