سابق چیف جسٹس ثاقب نثار بتائیں کس نے آپ کو مریم اور نواز شریف کو سزا دینے پر مجبور کیا؟،مریم نواز

0
44

اسلام آباد (این این آئی) پاکستان مسلم لیگ (ن) کی نائب صدرمریم نواز شریف نے کہا ہے کہ سابق چیف جسٹس ثاقب نثار بتائیں کس نے آپ کو مریم اور نواز شریف کو سزا دینے پر مجبور کیا؟،سابق چیف جس سازش کا مہرہ بنے اس سازش کے بینیفشری کا نام عمرا ن خان ہے،جنہوں نے ثاقب نثار کو مجبور کیا وہ آج بھی پردے کے پیچھے ہیں،ثاقب نثار اپنے دفاع میں کچھ نہیں کہہ رہے، وزرا ہلکان ہو رہے ہیں،حکومتی وزراء اپنے آپ کو بچانے کیلئے ثاقب نثار کا دفاع کررہے ہیں ،شواہد میرے پاس موجودہیں ، میرے وکلاء کی ٹیم دیکھ رہی ہے ، انگلیاں عدلیہ پر اٹھی ہیں ،عدلیہ اپنے وقار پر لگے داغ کو خود دھوئے،نوازشریف کیخلاف جے آئی ٹی بناکر ہیرے لائے گئے، جب پینڈورا پیپرز آیا تو وہ ہیرے کہاں چلے گئے۔بدھ کو یہاں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مریم نواز نے کہاکہ سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی ایک آڈیو آئی ہے ، میں نہیں جانتی سابق چیف جسٹس دوسری جانب کون صاحب ہیں سے گفتگو کررہے ہیں لیکن جیسی آڈیو منظر عام پر آئی اس کیساتھ پروپیگنڈا شروع ہوگیا حالانکہ آڈیو کی ایک نامور امریکی کمپنی سے فورنزک رپورٹ بھی ساتھ ہے انہوںنے واضح طورپر لکھا ہے کہ کسی طرح یہ آڈیو ایڈیٹ نہیں ہے ۔ انہوںنے کہاکہ آڈیو کو جھوٹ ثابت کر نے کی دن رات کوشش شروع ہو گئی ۔ انہوںنے کہاکہ ایک چینل کا کام صحافت ہے اور انہوںنے ایک ذمہ داری لے لی اور فورزنزک آڈٹ بھی شروع کر دیا اس چینل کا شکریہ ادا کر نا چاہوں گی جب آڈیو سامنے آئی تو ثاقب نثار نے رد عمل دیا یہ تو آواز ہی میری نہیں ہے ، کسی پریشر کے تحت چینل نے جلدی جلدی میں کہہ دیا یہ ثاقب نثار کی آواز ہے اور مختلف تقاریر سے آڈیو بنائی گئی ہے سب سے پہلے چینل کا شکریہ ادا کرنا چاہتی ہوں کہ ثابت کر دیا کہ یہ آواز ثاقب نثار ہے ، پھر ثاقب نثار کو بھی یاد آگیا ہے ،آواز ان کی ہے اور توڑ جوڑ کر بنائی گئی اور آپ نے ثاقب نثار سے منوالا آواز انہی کی ہے ۔ انہوںنے کلپ چلا کر ثابت کیا کہ یہ دو تین جملے فلاں تقریر سے اٹھائے ہیں اور تقریر بھی سنوا دیں ،میں بڑے ادب سے پوچھنا چاہتی ہوں کہ جو جملے سنوا دیں ہوسکتا وہ کوئی تکیہ کلام ہو ؟، جیسے عمران خان اپنی ہر تقریر میں کہتے ہیں آپ کو کچھ پتہ نہیں ، آپ نے گھبرانا نہیں ، سب سے پہلے آپ نے گھبرانا نہیں ، ہر روز تقریر کرینگے اور ہر روز یہی الفاظ استعمال کرینگے ،اگر وہ دو تین جملے جن کا اصل مدعے سے کوئی تعلق نہیں ہے ؟ یہ جملے ؟”جو چارج شیٹ ہے ” جو گناہوں کا اعتراف ہے”۔ انہوںنے کہاکہ ہمارے پاس جج منٹس ادارے دیتے ہیں اس میں کہاگیا ہے کہ میاں صاحب کو سزا دینی ہے اور کہا گیاکہ ہم نے خان صاحب کو لانا ہے ، بنتا ہے یا نہیں بنتا اب کر نا پڑے گا ، بیٹی کوبھی نہیں ، لائن پر دوسری جانب صاحب یہ کہہ ر ہے ہیں بیٹی کی سزا تو نہیں بنتی ہے تو سابق چیف جسٹس آگے سے کہتے ہیںمیں نے اپنے دوستوں سے بھی یہی کہا ہے اس میں کچھ کیا جائے لیکن میرے دوستوں نے مجھ سے اتفاق نہیں کیا