کراچی کی بندرگاہوں پر 50 کروڑ ڈالر سے زائد مالیت کی سبزیاں پھنس گئیں

0
345

کراچی (این این آئی)انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی کمی کی وجہ سے اشیائے خورو نوش اور ڈرگز بنانے والے امپورٹرز کو خام مال اور تیار مصنوعات کی درآمد کیلئے لیٹر آف کریڈٹ (ایل سی)کھولنے میں مشکلات کا سامنا ہے۔میڈیا رپورٹ کے مطابق آل پاکستان فروٹ اینڈ ویجیٹیبل ایکسپورٹرز، امپورٹرز اینڈ مرچنٹس ایسوسی ایشن (پی ایف وی اے)کے چیئرمین محمد شہزاد شیخ نے وزارت تجارت کو بتایا کہ 50 لاکھ 40 ہزار ڈالر سے زائد مالیت کے 417 کنٹینرز کراچی کے مختلف پورٹس پر روک لیے گئے ہیں-ان پھنسے ہوئے کنٹینرز میں پیاز کے 250 کنٹینرز ہیں جن کی مالیت 20 لاکھ ڈالر سے زائد ہے، اسی طرح سے ادرک کے 63 کنٹینرز ہیں جن کی مالیت 80 ہزار ڈالر ہے اور 104 کنٹینرز میں لہسن موجود ہے جس کی مالیت کی 20 لاکھ 50 ہزار ڈالر ہے۔ان کنٹینرز کو روکے جانے کی وجہ زرمبادلہ کی کمی کی وجہ سے کمرشل بینکوں کی جانب سے دستاویزات جاری کرنے سے انکار بتایا جاتا ہے۔محمد شہزاد شیخ نے کہا کہ سبزیوں کی کلیئرنس میں غیر معمولی تاخیر کے باعث ٹرمینل اور شپنگ چارجز کی وجہ سے ان کے اخراجات میں غیر معمولی اضافہ ہوجائے گا جس کے نتیجے میں صارفین کو مہنگی اشیا خریدنی پڑیں گی، انہوں نے وزارت پر زور دیا کہ وہ صورتحال کا فوری نوٹس لے۔دوسری جانب پاکستان ایسوسی ایشن آف لارج اسٹیل پروڈیوسرز (پی اے ایل ایس پی)کے سیکریٹری جنرل واجد بخاری نے بتایا کہ ہمارے ممبران کو بھی خام مال کی درآمد کیلئے ایل سی کھولنے میں مشکلات کا سامنا ہے، ایسا محسوس ہوتا ہے کہ بینکوں کے پاس ڈالر ختم ہو گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایل سی کھولنے میں تاخیر اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے منظوری اسٹیل کی پیداوار کو متاثر کر رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ خام مال کی عدم دستیابی کی وجہ سے کئی اسٹیل ملیں بند ہونے کے دہانے پر ہیں، کچھ کمپنیاں پہلے ہی پیداوار میں بڑی حد تک کمی کر چکیں جب کہ اسٹیل کی صنعت درآمد شدہ خام مال پر بہت زیادہ انحصار کرتی ہے۔انہوںنے کہاکہ اسٹیٹ بینک کی جانب سے ایل سی کی منظوری میں تاخیر اور کرنسی مارکیٹ میں غیر یقینی صورتحال کی وجہ سے اسٹیل بنانے والوں کو مشکلات کا سامنا ہے جبکہ کنٹینر چارجز میں بھی اضافہ ہورہا ہے، واجد بخاری نے کہا کہ پیداوار میں تعطل کے نتیجے میں مقامی مارکیٹ میں اس اضافہ لاگت کا دبا پڑے گا۔انہوں نے کہا کہ اسٹیل انڈسٹری سمجھتی ہے کہ اگر مسئلہ حل نہ ہوا تو اسٹیل کی قیمتوں میں 2 لاکھ 30 ہزار سے 2 لاکھ 40 ہزار روپے فی ٹن تک اضافہ ہو سکتا ہے ، رواں سال گزشتہ سال کے مقابلے میں اس کی درآمد میں 29 فیصد کمی واقع ہوئی ہے۔ادھر، دوا ساز کمپنیوں نے بھی خبردار کیا کہ خام مال کی درآمد کے لیے لیٹر آف کریڈٹ نہ کھولے جانے کی صورت میں دوا ساز کمپنیاں 2 ہفتوں کے بعد پیداوار جاری نہیں رکھ سکیں گی جس سے ملک میں ادویات کی سنگین قلت پیدا ہو جائے گی