آئندہ چند سالوں میں امریکی ڈالر کی قدر میں کمی کا امکان ،کے ٹریڈ سکیورٹیز

0
167

کراچی(این این آئی) پاکستان میں اسٹاک اینڈ کموڈٹی بروکریج کے ٹریڈ سکیورٹیز نے آئندہ چند سالوں میں امریکی ڈالر کی قدر میں کمی کا امکان ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکی معیشت نیچے چلی جائے گی، امریکی ڈالر کی قدر میں کمی کے ساتھ ابھرتی ہوئی معیشتوں کو فائدہ ہوگا،2019 سے اب تک ٹی بل کے اجرا میں 125 فیصد اضافہ ہوا ، ریزرو بیلنس میں 118 فیصد اضافہ ہوا ہے، ٹی بلز اور ریزرو بیلنس پر سود کی ادائیگیاں مل کر امریکی معیشت پر دبائوڈال رہی ہیں۔ چائنہ اکنامک نیٹ کے مطابق پاکستان میں اسٹاک اینڈ کموڈٹی بروکریج کے ٹریڈ سکیورٹیز کی جانب سے شائع ہونے والی امریکی ڈالر کے وسط اور طویل مدتی رجحان کے حوالے سے ایک تحقیقی رپورٹ میں کہا گیا کہ مالی اور کرنٹ اکانٹ خسارے کے دبا اور توسیعی مانیٹری پالیسی اور محدود مالیاتی پالیسی کے متوقع امتزاج کے پیش نظر آئندہ چند سالوں میں امریکی ڈالر کی قدر میں کمی کا امکان ہے۔ رپورٹ میں عالمی زرمبادلہ میں امریکی ڈالر کے غلبے کا تنقیدی جائزہ اور تجارت، تیل اور طویل مدت میں امریکی ڈالر کی قدر کو تشکیل دینے والے دیگر جیو پولیٹیکل اور معاشی عوامل میں موجودہ بین الاقوامی حرکیات پر تکنیکی تجزیہ پیش کرتے ہوئے 2023 میں امریکہ میں دیکھی جانے والی ترقی کے دو اہم محرکات کی عدم موجودگی کا ذکر کیا گیا ہے، امریکی مالیاتی خسارے میں غیر معمولی اضافہ، اور سرپلس بچت میں کمی،اس کے نتیجے میں، کھپت میں کمی اور کاروباری سرمایہ کاری کے کمزور ہونے کی وجہ سے ترقی کی رفتار سست ہونے کا امکان ہے، جس سے امریکی معیشت نیچے چلی جائے گی۔چائنہ اکنامک نیٹ کے مطابق رپورٹ میں نشاندہی کی گئی ہے کہ یہ رجحان وسیع تر مارکیٹ کے شرکا کے اندازوں سے مطابقت رکھتا ہے، جو امریکی ڈالر انڈیکس (ڈی ایکس وائی) کی پیش گوئی کرتے ہیں، جو چھ بڑی کرنسیوں کی ٹوکری کے مقابلے میں امریکی ڈالر کی قدر کا پیمانہ ہے، جو 2026ـ28 فارن ہائیٹ تک 102.4 کی موجودہ سطح سے گھٹ کر 96ـ96.2 تک آ جائے گا، رپورٹ میں نشاندہی کی گئی ہے کہ امریکی انتظامیہ کی طرف سے براہ راست اور ثانوی پابندیوں کی وجہ سے امریکی ڈالر میں اثاثے رکھنے یا فنانس بڑھانے کے خطرات میں اضافہ ہوتا ہے۔ مرکزی بینک اور پالیسی ساز بین الاقوامی فنانسنگ کے لئے امریکی ڈالر سے دور متنوع ہونا چاہتے ہیں۔ چائنا اکنامک نیٹ کو انٹرویو میں کے ٹریڈ سیکیورٹیز کے چیئرمین علی فرید خواجہ نے کہا پیغام کافی بلند اور واضح ہے۔ اس نے کہا کہ مریکی ڈالر کو پیسے کی چھپائی یا اس کی ساکھ کو کنٹرول کرنے کے آلے کے طور پر استعمال گلوبل ساتھ کے خطرے میں آتا ہے اور پابندیوں کے نفاذ کی پالیسی کے طور پر اس کا استعمال سب سے زیادہ نقصان دہ عنصر رہا ہے کیونکہ دنیا کی جی ڈی پی کا 28 فیصد پابندیوں کی زد میں ہے ، جو ان ممالک کے لئے اپنی کرنسی استعمال کرنے کے بارے میں سوچنے کے لئے کافی بڑا ہے. چائنہ اکنامک نیٹ کے مطابقآئی ایم ایف کے اعداد و شمار کے مطابق غیر ملکی ذخائر کے طور پر مرکزی بینکوں کے پاس موجود امریکی ڈالر کا حصہ 28 سال کی کم ترین سطح پر ہے۔ امریکی ڈالر پر لوگوں کے کم ہوتے اعتماد اور ممکنہ کمی کے ساتھ ساتھ سونے کی قیمتوں میں بھی اضافہ ہو رہا ہے، یہاں تک کہ گزشتہ ہفتے جاری ہونے والے 3.5 فیصد سی پی آئی کے بعد شرح سود میں کمی میں تاخیر کی توقع بھی ہے۔ امریکی معیشت کا عروج اس کے طرز عمل اور اس کی آزاد منڈیوں پر لوگوں کے یقین پر مبنی ہے۔ بدقسمتی سے، حالیہ سیاسی اقدامات، جیسے تحفظ پسندی، تجارتی رکاوٹوں کے ساتھ ساتھ کارپوریٹ پراپرٹی کی خلاف ورزی پوری بنیاد کو توڑ رہی ہے، آج اگر میں ایک ملک ہوں، اگر میں گلوبل ساوتھ کی ابھرتی ہوئی مارکیٹوں میں سے ایک ہوں تو مجھے فکر ہوگی کہ کیا میں اگلا روس بنوں گا یا اسی قسم کی تجارتی رکاوٹوں کا سامنا کروں گا جس کا چین کو اس وقت سامنا ہے۔ چائنہ اکنامک نیٹ کے مطابق مارچ میں نان فارم پے رول میں اضافے کی وجہ سے امریکہ میں لیبر مارکیٹ کی چمک دمک کے باوجود، جس نے ایک بار پھر شرح سود میں کٹوتی کے لئے لوگوں کی توقعات کو کم کر دیا، طویل عرصے سے موجود مسئلہ اب بھی موجود ہے، ممکنہ طور پر فیڈرل ریزرو کو شرح سود میں کٹوتی کو نافذ کرنے اور سال کے اندر کسی وقت مالیاتی نرمی شروع کرنے پر مجبور کیا جا سکتا ہے: وبائی امراض سے متعلق خسارے کی فنڈنگ میں بڑی تعداد میں ٹی بل جاری کرنا شامل ہے۔ اور فیڈ کی جارحانہ شرح سود میں اضافہ اور بڑے ریزرو بیلنس پر ادائیگیوں نے اس پالیسی مکس میں مزید حصہ ڈالا۔ چائنہ اکنامک نیٹ کے مطابق 2019 سے اب تک ٹی بل کے اجرا میں 125 فیصد اضافہ ہوا ہے اور ریزرو بیلنس میں 118 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ اور فیڈ کا ہدف شرح 2019 کے مقابلے میں 125 فیصد زیادہ ہے۔ لہذا ٹی بلز اور ریزرو بیلنس پر سود کی ادائیگیاں مل کر امریکی معیشت پر دبا وڈال رہی ہیں جس کی وجہ سے فیڈرل ریزرو اگلے چند سالوں میں مانیٹری پالیسی پر اپنا موقف نرم کرے گا۔ چائنہ اکنامک نیٹ کے مطابق رپورٹ میں اشارہ کیا گیا ہے کہ امریکی ڈالر کی قدر میں کمی کے ساتھ ابھرتی ہوئی معیشتوں کو فائدہ ہوگا۔ مالیاتی میکانزم کے لحاظ سے ، کمزور امریکی ڈالر کے دوران عالمی لیکویڈیٹی کی دستیابی اور نرم مالی حالات ابھرتی ہوئی مارکیٹوں میں فنانسنگ کے لئے فائدہ مند ہیں۔ چائنہ اکنامک نیٹ کے مطابق دوسری جانب سونے اور بلک اجناس کی پہلے سے ہی بے تحاشا قیمتیں بلند رہ سکتی ہیں کیونکہ مرکزی بینک ڈالر سے ہٹ کر متبادل نظام وں کی طرف راغب ہو رہے ہیں اور ممالک عالمی سپلائی چین میں خلل کے درمیان ماحول دوست تبدیلی کے معاملے میں خود کفیل یا مسابقتی بننے کی کوشش کر رہے ہیں۔ چائنہ اکنامک نیٹ کے مطابق حقیقی پیسے کے سرمایہ کار طویل مدتی بانڈز کی حمایت کرکے تیزی سے اپنی سرمایہ کاری کو ایڈجسٹ کرسکتے ہیں