سی پیک خطے میں تبدیلی کی قوت کے طور پر ابھر کر سامنے آیا ، جو منصوبے کبھی تصور تھے اب حقیقت بن رہے ہیں،احسن اقبال

0
222

اسلام آباد (این این آئی)وفاقی وزیر منصوبہ بندی ،ترقی ،اصلاحات وخصوصی اقدامات پروفیسر احسن اقبال نے کہاہے کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری کے اگلے مرحلے میں حکومت سے حکومت (جی ٹو جی)تعاون سے کاروبار سے کاروبار (بی ٹو بی)تعاون کی طرف منتقل ہو رہے ہیں، صنعت کاری، زراعت اور سائنس و انفارمیشن ٹیکنالوجی میں اعلی معیار کی ترقی کو ترجیح بنانا ہے ، اب وقت آگیا ہے سرمایہ کاروں اور مینوفیکچررز کو خصوصی اقتصادی زونز (SEZs) میں راغب کیا جائے، گوادر کو کاروباری ضلع کے طور پر ترقی دی جائے اور گوادر میں اعلی معیار کے سیاحتی مقامات بنائے جائیں۔ اس مقصد کے لیے، ہم ان شعبوں میں تعاون کو فروغ دینے کے لیے ایک مفاہمت نامے پر دستخط کرنے کی تجویز پیش کرتے ہیں۔جمعہ کو سی پیک کے مشترکہ تعاون کمیٹی کے افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وفاقی وزیر نے کہاکہ چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک )کے 13ویں جوائنٹ کوآپریشن کمیٹی (جے سی سی ) کے اجلاس میں خوش آمدید کہتے ہوئے بہت خوشی محسوس کر رہا ہوں۔ یہ میرے لیے باعث فخر ہے کہ میں نے اب تک منعقد ہونے والے جے سی سی – 13اجلاسوں میں سے 10 اجلاسوں کی صدارت کی ہے۔ میں چین کے نیشنل ڈویلپمنٹ اینڈ ریفارم کمیشن (این ڈی آر سی)اور تمام وزرا و مالیاتی اداروں کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں جن کے تعاون اور مسلسل حمایت نے چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک )کو عظیم کامیابی بنایا۔انہوں نے کہاکہ دونوں ممالک کے وفود یہاں جمع ہوئے ہیں تاکہ ہم اس حکمت عملی کے تحت اب تک کی گئی کامیابیوں، درپیش چیلنجز اور مستقبل کے امکانات پر غور کریں تاکہ اس اقتصادی راہداری کو نئی بلندیوں تک پہنچا سکیں۔ وہ منصوبے جو کبھی تصور میں تھے اور دستاویزی شکل میں تھے، اب حقیقت بن رہے ہیں، جو ہمارے مضبوط برادرانہ تعلقات اور ہمارے ہر موسم کے اسٹریٹجک تعاون کی ترقی کی علامت ہیں۔ انہوں نے کہاکہ سی پیک نے خطے میں ایک تبدیلی کی قوت کے طور پر ابھر کر سامنے آیا ہے، خاص طور پر پاکستان کے لیے بیلٹ اینڈ روڈ انیشیٹو(بی آر آئی )کا اہم منصوبہ ہے۔ پچھلی دہائی کے دوران، چین پاکستان اقتصادی راہداری نے متعدد اتار چڑھا کا سامنا کیاجس نے ہماری پائیدار شراکت داری اور اس کی تبدیلی کی ترقی کی صلاحیت کو ثابت کیا ہے۔ اس نے ہمیں لچک کی اہمیت اور مسائل کو پیشگی حل کرنے کی صلاحیت سکھائی ہے،ان تجربات کے ذریعے، ہم نے پائیدار شراکت داری کے فن میں قیمتی بصیرت حاصل کی ہے جو وقت کی کسوٹی پر پوری اترتی ہیں۔وفاقی وزیر نے کہاکہ گزشتہ سال، پاکستان اور چین نے سی پیک کے تحت کامیاب اعلی معیار کی ترقی اور مزید قریبی تعاون کی ایک دہائی منائی۔ ان تقریبات کے دوران، نائب وزیراعظم، ہی لیفینگ نے صدر شی جن پھنگ کے تجویز کردہ پانچ نئے راہداریوں کی نقاب کشائی کی، جن میں ڈیویلپمنٹ کوریڈور،ایمپلاینمٹ جنریشن کوریڈور ،انوویشن کوریڈور،گرین کوریڈور اور ریجنل کنیکٹیو یٹی کوریڈور شامل ہیں ۔انہوں نے کہاکہ پاکستانی جانب نے سی پیک کے دوسرے مرحلے کو ان نئے راہداریوں کے شامل کرنے کے ساتھ اپ گریڈ کرنے کے چینی قیادت کے وژن کو سراہا جو پاکستان کے 5ایز فریم ورک کے ساتھ ہم آہنگ ہیں۔ این ڈی آر سی کے ساتھ مل کر ان راہداریوں کے دائرہ کار اور نفاذ کے منصوبے کو حتمی شکل دینے کے لیے تیار ہیں، دونوں جانب اس مشترکہ وژن کے لیے انتہائی پرعزم ہیں، اور مل کر، چین اور پاکستان نے مشترکہ خوابوں کے سفر کا آغاز کیا ہے، اعلی معیار کے ترقیاتی منصوبے بنانے کے لیے ہاتھ میں ہاتھ ڈال کر کام کر رہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ سی پیک نے 2013 میں اپنے آغاز سے ہی مسلسل ترقی کی ہے۔ توانائی کے شعبے میں، ہم نے کامیابی کے ساتھ 16 منصوبے مکمل کیے ہیں، جن کی پیداوار کی صلاحیت 8,020 میگاواٹ ہے، دو کوئلے کی کانیں اور ایک660کے وی ٹرانسمیشن لائن کے ساتھ ان منصوبوں میں کل سرمایہ کاری تقریبا 16 ارب ڈالر ہے۔ فی الحال، ایک ہائیڈرو پاور منصوبہ 884 میگاواٹ سوکی کناری، جس کی مالیت 1.707 ارب ڈالر ہے، زیر تعمیر ہے اور توقع ہے کہ نومبر 2024 تک مکمل ہو جائے گا۔ تین پاور منصوبے، جن میں دو ہائیڈل (آزاد پتن 700 میگاواٹ اور کوہالہ 1124 میگاواٹ)اور ایک کوئلے پر مبنی (گوادر)ہیں، جن کی پیداواری صلاحیت 2124.7 میگاواٹ ہے، 4.157 ارب ڈالر مالیت کے ہیں، مالیاتی بندش حاصل کرنے کے مراحل میں ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ہم چینی فریق کی حمایت کے خواہاں ہیں کہ ان منصوبوں کا سنگ بنیاد جلد از جلد رکھا جا سکے۔انہوں نے کہا کہ توانائی کے شعبے میں ایک بڑی پیش رفت پاکستان اور چین کے درمیان مزید گہرائی سے مطالعہ اور درآمدی کوئلے سے مقامی کوئلے پر پاور پلانٹس کو منتقل کرنے کے لیے اتفاق رائے ہے، یہ اسٹریٹجک اقدام نہ صرف پاکستان کے درآمدی بل کو کم کرے گا بلکہ چینی کمپنیوں کو ادائیگیاں بھی آسان کرے گا۔ میں تھر میں کوئلے کی کان کنی کی ترقی کا اشتراک کرتے ہوئے خوش ہوں اور اس نے ہمیں اس شاندار مقامی کوئلے کے وسائل کا استعمال کرنے کے قابل بنایا ہے، جو دہائیوں سے غیر استعمال شدہ رہا، ہمارے توانائی کے تحفظ اور اقتصادی ترقی میں نمایاں طور پر حصہ ڈال رہا ہے