صدر پیوٹن ملک میں مارشل لا نافذ کرسکتے ہیں’ امریکی نیشنل انٹیلی جنس کا خدشہ

0
35

واشنگٹن(این این آئی) روسی صدر ولادی میر پیوٹن یوکرین جنگ میں اپنے مقاصد کی کامیابی کے لیے ملک میں مارشل لا نافذ کرسکتے ہیں۔ اس بات کا خدشہ امریکہ کی نیشنل انٹیلی جنس نے ظاہر کیا ہے۔ یو ایس نیشنل انٹیلی جنس کی ڈائریکٹر ایورل ہینس نے کہا ہے کہ ممکنہ طور پر صدر ولادی میر پیوٹن مزید ناقابل اعتبار بن جائیں گے اور یوکرین میں اپنے مقاصد کے حصول کے لیے ملک میں مارشل لا لگا سکتے ہیں۔انہوں نے سینیٹ کمیٹی کی سماعت کے دوران کہا کہ صدر پیوٹن کے مقاصد روسی فوج کی صلاحیتوں سے بڑھ کر ہیں جس کا مطلب ہے کہ آئندہ چند ماہ کے دوران ہمیں زیادہ ناقابل اعتبار اور مزید کشیدہ حالات کا سامنا کرنا پڑے گا۔ایورل ہینس کے مطابق اس بات کا امکان بڑھ گیا ہے کہ صدر پیوٹن زیادہ سخت اقدامات کریں گے جن میں مارشل لا نافذ کرنا، صنعتی پیدوار کی سمت تبدیل کرنا یا مزید سخت فوجی اقدامات شامل ہیں تاکہ ان کو اپنے مقاصد کی تکمیل کے لیے زیادہ وسائل میسر ہوں۔سینیٹ کمیٹی کی سماعت کے دوران ایورل ہینس نے کہا کہ روس کے وجود کو خطرہ درپیش نہ ہونے کی صورت میں ولادی میر پیوٹن کیمیائی ہتھیاروں کے استعال کے آپشن کو استعمال نہیں کریں گے۔